Home / Tag Archives: مدت ہوٸی ہے موت کو مہماں کیے ہوٸے

Tag Archives: مدت ہوٸی ہے موت کو مہماں کیے ہوٸے

مدت ہوئی ہے موت کو مہماں کیے ہوئے (عبدلحمید عدم)

مدت ہوئی ہے موت کو مہماں کیے ہوئے ہستی کی مشکلات کو آساں کیے ہوئے اب کیا درست ہونگے زمانے کے کاروبار؟ وہ آ رہے ہیں بال پرشاں کیے ہوئے رخ سے نقاب ہٹا کی بڑی دیر ہو گئی ماحول کو تلاوتِ قرآں کیے ہوئے پھر اٹھ رہا ہے دل میں خرابی ولولہ بازارِاحتیاط کو ویراں کیے ہوئے پھر گرم خواہشات کا موسم ہے جوش پر قطرے کو موج موج کو طوفاں کیے ہوئے پھر آ رہی ہے بام پر …

Read More »