Home / اردو ادب / شاعری / مرمٹا ہوں خیال پر اپنے (جون ایلیا)

مرمٹا ہوں خیال پر اپنے (جون ایلیا)

مرمٹا ہوں خیال پر اپنے
وجد آتا ہے حال پر اپنے

ابھی مت دیجیو جواب کہ میں
جھوم تو لوں سوال پر اپنے

عمر بھر اپنی آرزو کی ہے
مر نہ جاؤں وصال پر اپنے

اک عطا ہے مری ہوس نگہی
ناز کر خدو خال پر اپنے

اپنا شوق ایک، حیلہ ساز آؤ
شک ہے اس کو جمال پر اپنے

جانے اس دم وہ کس کا ممکن ہو
بحث مت کر محال پر اپنے

تُو بھی آخر کمال کو پہنچا
مست ہوں میں زوال پر اپنے

کوئی حالت تو اعتبار میں ہے
خوش ہوا ہوں ملال پر اپنے

خود پہ نادم ہوں جون یعنی میں
ان دنوں ہوں کمال پر اپنے

About محمد سلیم

محمد سلیم ایک کمپیوٹر پروگرامر ہیں اور ایک سافٹ وئیر ہاوس چلا رہے ہیں۔ سائنس خصوصا فلکیات پر پڑھنا اور لکھنا ان کا مشغلہ ہے۔ ان کے مضامین یہاں کے علاوہ دیگر کئی ویب سائٹس پر بھی پبلش ہوتے ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *