Home / اردو ادب / شاعری / زندگی ان کی چاہ میں گزری (شکیل بدایونی)

زندگی ان کی چاہ میں گزری (شکیل بدایونی)

زندگی ان کی چاہ میں گزری
مستقل درد و آہ میں گزری

رحمتوں سے نباہ میں گزری
عمر ساری گناہ میں گزری

ہائے وہ زندگی کی اِک ساعت
جو تری بارگاہ میں گزری

سب کی نظروں میں سر بلند رہے
جب تک ان کی نگاہ میں گزری

میں وہ اک رہروِ محبت ہُوں
جس کی منزل بھی راہ میں گزری

اِک خوشی ہم نے دل سے چاہی تھی
وہ بھی غم کی پناہ میں گزری

زندگی اپنی اے شکیل اب تک
تلخی رسم و راہ میں گزری

شکیل بدایونی

از:-کُلّیاتِ شکیل بدایونی ص ۱۸۷/۱۸۸

About محمد سلیم

محمد سلیم ایک کمپیوٹر پروگرامر ہیں اور ایک سافٹ وئیر ہاوس چلا رہے ہیں۔ سائنس خصوصا فلکیات پر پڑھنا اور لکھنا ان کا مشغلہ ہے۔ ان کے مضامین یہاں کے علاوہ دیگر کئی ویب سائٹس پر بھی پبلش ہوتے ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *