Home / اردو ادب / شاعری / دید حیران اُس گلی میں ہے (جون ایلیاء)

دید حیران اُس گلی میں ہے (جون ایلیاء)

دید حیران اُس گلی میں ہے
کیا عجب شان اُس گلی میں ہے

بات میں جان سے گزر جانا
کتنا آسان اُس گلی میں ہے

اور اک بار مجھ کو جانے دو
سارا سامان اُس گلی میں ہے

کیا خبر اِن محل نشینوں کو
اپنی جو آن اُس گلی میں ہے

کیا بتاؤں ہے کیا وہ جان گلی
میری تو جان اُس گلی میں ہے

میں کہیں بھی رہوں کہیں جاؤں
دل کا ریٹھان اُس گلی میں ہے

وہی دیوار و در وہ میرا گھر
وہ دالان اُس گلی میں ہے

میں جو کافر ہوں اُس گلی باہر
میرا ایمان اُس گلی میں ہے

اُس گلی پر ہوں جان سے قربان
میری پہچان اُس گلی میں ہے

جون ایلیاء

About محمد سلیم

محمد سلیم ایک کمپیوٹر پروگرامر ہیں اور ایک سافٹ وئیر ہاوس چلا رہے ہیں۔ سائنس خصوصا فلکیات پر پڑھنا اور لکھنا ان کا مشغلہ ہے۔ ان کے مضامین یہاں کے علاوہ دیگر کئی ویب سائٹس پر بھی پبلش ہوتے ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *